اردوئے معلیٰ

Search

کشتِ ادراک میں جب کھلتے ہیں نکہت کے گلاب

خامۂ شوق پرو لاتا ہے مدحت کے گلاب

 

تیرے ہونٹوں کا تبسّم ہے کہ کلیوں کی چٹک

تیری باتوں کا تقدّس ہے کہ نزہت کے گلاب

 

تیری یادیں ہیں کہ تسکیں کے مہکتے گلبن

دشتِ غربت میں اگاتی ہیں وہ بہجت کے گلاب

 

وردِ لب رکھتا ہوں میں نامِ محمد پہ درود

شاخِ احساس پہ کھلتے ہیں محبت کے گلاب

 

تیرے لفظوں کی ہی خیرات ہے حکمت، دانش

ہر زماں تازہ بہ تازہ ہیں بصیرت کے گلاب

 

ہم ہی کم کوش تہی دست تھے ورنہ آقا

تیرے قرآں میں مہکتے ہیں ہدایت کے گلاب

 

جستجو ، علم کے، تحقیق کے موسم روٹھے

فکرِ مسلم کو عطا پھر سے ہوں حکمت کے گلاب

 

تیرا دیں ہے کہ نئے دور کا تازہ جھونکا

تیری سیرت ہے کہ ہر عہد میں ندرت کے گلاب

 

اپنے نوری کو بھی دیں شہرِ معنبر کی نوید

طشتِ دل میں لیے بیٹھا ہے وہ منّت کے گلاب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ