اردوئے معلیٰ

Search

کعبہ سیاہ پوش ہے کس کے فراق میں

اسود جمال زاد ہے کس طرح طاق میں

 

کعبے کی داستان ہو کیسے نہ دل ربا

آتا ہے تیرا نام سیاق و سباق میں

 

کیوں کر مطاف میں ہے اجالوں کا رتجگا

ہے کس کا نام رکّھا ہوا دل کے طاق میں

 

لمسِ لبِ حبیب کی سر مستی دیکھیے

زم زم رواں ہے آج بھی کس اشتیاق میں

 

وردِ زباں درود ہو ذکرِ خدا کے ساتھ

پھر تو کمال لطف ہو اس انطباق میں

 

کعبے پہ ہو نگاہ تو دل میں ترا خیال

کیسا سرور و کیف ہو اس اتفاق میں

 

آقا ترے حضور بھی آئے ترا ظفر

لائے گُلاب نعت کے طشتِ وراق میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ