کعبے کی رونق کعبے کا منظر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

کعبے کی رونق کعبے کا منظر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

دیکھوں تو دیکھے جاؤں برابر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

 

حمدِ خدا سے تر ہیں زبانیں کانوں میں رس گھولتی ہیں اذانیں

بس اک صدا آرہی ہے برابر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

 

ترے حرم کی کیا بات مولیٰ ترے کرم کی کیا بات مولیٰ

تا عمر کر دے آنا مقدّر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

 

مانگی ہیں میں نے جتنی دعائیں مقبول ہوںگی منظور ہوںگی

میزابِ رحمت ہے میرے سر پر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

 

یاد آگئیں جب اپنی خطائیں اشکوں میں ڈھلنے لگیں التجائیں

رویا غلاف کعبہ پکڑ کر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

 

بھیجا ہے جنت سے تجھ کو خدا نے چوما ہے تجھ کو خود مصطفی نے

اے سنگِ اسود ترا مقدّر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

 

دیکھا صَفا بھی مَروہ بھی دیکھا رب کے کرم کا جلوہ بھی دیکھا

دیکھا رواں اک سروں کا سمندر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

 

مولیٰ صبیحؔ اور کیا چاہتا ہے بس مغفرت کی عطا چاہتا ہے

بخشش کے طالب پر اپنا کرم کر اللہُ اکبر اللہُ اکبر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ