اردوئے معلیٰ

Search

 

کل بھی تھا ہوں آج بھی ہوں گا بھی آئندہ فقیر

مصطفیٰ سے عشق میں ہوں خوب تابندہ فقیر

 

مصطفیٰ سے عشق میں دیکھو مرا ایمان تُو

حشر میں بھی دیکھتا ہوں گا میں گل شندہ فقیر

 

اے خدا!دکھ دے مجھے لیکن ذرا یہ دیکھنا

میں نبی تیرا نہیں، بندوں میں ہوں بندہ فقیر

 

کیوں مرے دل کی دعا آئے پلٹ کر عرش سے

پیر کامل ہے مرا کوہاٹ میں زندہ فقیر

 

مصطفیٰ سے عشق میں تیرا ہوں اک ادنیٰ غلام

آپ کے ہوتے بھلا کیوں ہو گا شرمندہ فقیر

 

تیری خوشبو یہ جہاں گل ہے مدینہ آپ کا

کاش! میں ہوتا مدینے کا ہی باشندہ فقیر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ