کمالِ عجز سے ہے، عجزِ باکمال سے ہے

کمالِ عجز سے ہے، عجزِ باکمال سے ہے

یہ نعت ہے، یہ عقیدت کے خدو خال سے ہے

 

مجھے بھی ناجی سفینہ میں رکھ مرے مولا

مری بھی نسبتِ نوکر انہی کی آل سے ہے

 

سخی پہ ہے وہ جسے، جیسے، جب، عطا کر دے

عطا کا واسطہ عرضی سے ہے نہ حال سے ہے

 

بہار کو ترے کوچے سے ہے وہی نسبت

جو رنگ و نکہتِ ُگل کو وجودِ ڈال سے ہے

 

عجیب طرح کی سرشاریوں میں ہوں آقا

گزارا جب سے ترے ریزۂ نوال سے ہے

 

مجھ ایسے فرد سے ممکن کہاں ثنا تیری

بس ایک عرض ہے جو صیغۂ نڈھال سے ہے

 

بتا مدینے گیا تھا تو کھو گیا تھا کہاں

سوال میرا بجا طور پر سوال سے ہے

 

ہے ان کی مدح خود ان کی عطا سے ہی ممکن

یہ جذبِ حال سے ممکن نہ حرفِ قال سے ہے

 

کرم کے بعد بھی قائم رہی نویدِ کرم

معاملہ مرا تجھ جیسے لاج پال سے ہے

 

ہوائیں لائی ہیں مقصودؔ ُمشکِ کوئے اِرَم

بلاوا آیا مجھے قریۂ جمال سے ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

وہ جو شبنم کی پوشاک پہنے ہوئے
میں پہلے آبِ زم زم سے قلم تطہیر کرتا ہوں​
گل شاہ بحر و بر کا اک ادنیٰ غلام ہے
نہیں ہے ارض وسما میں کوئی شریک خدا
ہو اگر مدحِ کفِ پا سے منور کاغذ
جائے گی ہنستی ہوئی خلد میں اُمت اُن کی
گھِرے طُوفاں میں ہیں، نظرِ کرم سرکارؐ ہو جائے
مرے آقاؐ کرم یہ فرمائیں
وہی دورِ مصطفیؐ سا آئے لوٹ کر زمانہ
جو مجھ سے خطا کار و زیاں کار بھی ہوں گے