کمال اسم ترا، بے مثال اسم ترا

کمال اسم ترا، بے مثال اسم ترا

جہانِ حُسن میں عینِ جمال اسم ترا

 

عجب ہے حمد و محمد میں اشتراکِ جمیل

کرم سراپا ہے یہ میم دال اسم ترا

 

بکھرنے لگتا ہُوں جب بھی مَیں مثلِ برگِ خزاں

تو مجھ کو لیتا ہے پھر سے سنبھال، اسم ترا

 

طمانیت مرے اندر ورود کرتی ہے

گلے میں لیتا ہُوں جب بھی مَیں ڈال اسم ترا

 

مجھے یقیں ہے کہ آئے گی مستجاب نوید

دُعا بہ دست ہے جانِ مقال اسم ترا

 

دراز شب میں جو بُجھنے لگے چراغِ سخن

سخن میں لیتا ہُوں پھر میں اُجال اسم ترا

 

تری طرف ہی تو اُٹھتی تھی ہر نگاہِ ادب

اذاں میں لیتے تھے جب بھی بلال اسم ترا

 

ہمیشہ دیتا ہے مجھ کو وہ نسبتوں کا شرَف

بہت ہی رکھتا ہے میرا خیال، اسم ترا

 

پکارتا ہوں اُسے جب اُداس لمحوں میں

نکھار دیتا ہے روئے ملال، اسم ترا

 

ہر ایک عہد کے ماتھے پہ ہے جلی مرقوم

ہر ایک عہد کے سب خد و خال، اسم ترا

 

بجا کہ تند ہواؤں کی زد پہ ہے مقصودؔؔ

ہمیشہ رکھتا ہے اس کو بحال اسم ترا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

تیرے قدموں میں آنا میرا کام تھا
ہم تو آواز میں آواز ملاتے ہیں میاں
طیبہ کے مسافر کو کہہ دو کہ سنبھل جائے
جب سے ہوا وہ گل چمن آرائے مدینہ
جب مسجد نبوی کے مینار نظر آئے
اعلیٰ واطہر و اکمل وکامل صلی اللہ علیٰ محمد
جو ترے در پہ، دوانے سے آئے بیٹھے ہیں
ایسے ہو حُسنِ خاتمہء جاں نثارِ عشق
مرے آقا کی مسجد کے منارے داد دیتے ہیں
یا نبی نظرِ کرم فرمانا اے حسنین کے نانا

اشتہارات