کوئی نہیں ھے یہاں جیسا خُوبرُو تُو ھے

کوئی نہیں ھے یہاں جیسا خُوبرُو تُو ھے

حسیں بہت ھیں مگر میرے یار ! تُو تُو ھے

 

وہ روشنی تھی کہ آنکھیں تو اُٹھ نہیں پائیں

مَیں تیرے پاوؑں سے جانا کہ رُوبرُو تُو ہے

 

یہ اور بات کہ پھر سلسلہ ھی چل نکلا

خدا گواہ ، مری پہلی آرزُو تُو ھے

 

ترے کرم سے مرے اشک معتبر ٹھہرے

بچھڑنے والے ! مرے غم کی آبرُو تُو ھے

 

ترے ھی لُطف سے رھتے ھیں میرے زخم ھرے

سو نخلِ غم کے لئے باعثِ نمُو تُو ھے

 

تُو شش جہات میں ھے اور مرے وجود میں بھی

نہیں ھے یُوں کہ فقط مرے چار سُو تُو ھے

 

گروہِ گُل بَدَناں ہو کہ محفلِ عُشاق

تمام شہر کا موضوعِ گفتگُو تُو ھے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ