اردوئے معلیٰ

Search

کوششِ مسلسل بھی رائیگاں سی لگتی ہے

آرزوئے دل اب تو نیم جاں سی لگتی ہے

 

کچھ مشیتِ یزداں سرگراں سی لگتی ہے

یا مری طبیعت ہی بد گماں سی لگتی ہے

 

نغمہ جُو نہ ہو اے دل وقت اب نہیں ایسا

ہر گھڑی مجھے دنیا نوحہ خواں سی لگتی ہے

 

جب بھی آئے یہ ظالم ساتھ لے کے ہے جائے

موت زندگی کی کچھ رازداں سی لگتی ہے

 

فنِ سحر کہیے یا سحرِ فن ستم گر کا

جور و قہر کی صورت مہرباں سی لگتی ہے

 

عضو عضو ناکارہ عالمِ ضعیفی میں

جز نظرؔ کہ ہے بالغ نوجواں سی لگتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ