اردوئے معلیٰ

Search

کون آخر زینتِ آغوشِ محفل ہو گیا

ایک ہی نظارہ میں جانِ رگِ دل ہو گیا

 

دو نگاہوں کا تصادم اپنا اپنا پھر نصیب

کوئی قاتل اور کوئی مرغِ بسمل ہو گیا

 

اے دلِ نا عاقبت اندیش جلتا ہے تو جل

حسنِ عالم سوز کے تو کیوں مقابل ہو گیا

 

ہیں کرم فرما کبھی اس پر کبھی جور آزما

خوب ہے جیسے انہیں کا دل مرا دل ہو گیا

 

حشر سے پہلے نہیں امکان اٹھنے کا مرے

مر کے اب تو اور پابندِ سلاسل ہو گیا

 

دل رکا۔ دھڑکن گئی۔ آنسو تھمے ۔سوزش مٹی

موت کیا آئی سکونِ قلب حاصل ہو گیا

 

التفاتِ چشمِ ساقی کیا ہوا مجھ پر نظرؔ

میں بھی جانِ التفاتِ اہلِ محفل ہو گیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ