کون پانی کو اڑاتا ہے ہوا کے دوش پر​

کون پانی کو اڑاتا ہے ہوا کے دوش پر​

کس نے بخشی پیڑ کو آتش پذیری سوچئے​

 

کس کے لطفِ خاص سے نغمہ فشاں ہے سانس کی​

دھیمی دھیمی، دھیری دھیری یہ نفیری سوچئے​

 

کس کی شانِ کُن فکاں سے پھوٹتا ہے خاک سے​

یہ گیاہِ سبز کا فرشِ حریری سوچئے​

 

کون دیتا ہے جوانی میں لہو کو حِدّتیں​

کون کردیتا ہے عاجز وقتِ پیری سوچئے​

 

ہر دلِ بےمِہر پر مُہریں لگادیتا ہے کون​

کون کرتا ہے عطا روشن ضمیری سوچئے​

 

بجلیوں کو کون سی سرکار سے صادر ہوا​

ابر کے زنداں کا فرمانِ اسیری سوچئے​

 

دلق پوشوں، خانہ بردوشوں کو کس نے سونپ دی​

جاہِ فغفوری، کلاہِ اَردشیری سوچئے​

 

وادیِ بطحا میں اک اُمّی پیمبر بھیج کر​

کس نے کی انسانیت کی دستگیری سوچئے​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اس پر، کہ نام آتا ہے بعد اللہ کے جس کا
ہر آنکھ میں پیدا ہے چمک اور طرح کی
کیا پیار بھری ہے ذات ان کی جو دل کو جِلانے والے ہیں
نوری محفل پہ چادر تنی نور کی ، نور پھیلا ہوا آج کی رات ہے
کافِ کن کا نقطۂ آغاز بھی تا ابد باقی تری آواز بھی
حامل جلوہءازل، پیکر نور ذات تو
سمایا ہے نگاہوں میں رُخِ انور پیمبر کا
جس کی دربارِ محمد میں رسائی ہوگی
سکونِ قلب و نظر تھا بڑے قرار میں تھے
خیال کیسے بھلا جائے گا جناں کی طرف

اشتہارات