کچھ ایسی لطف و کرم کی ہوا چلی تازہ

کچھ ایسی لطف و کرم کی ہوا چلی تازہ

کہ میرے دل میں کھلی نعت کی کلی تازہ

 

حرم کی تیرہ شبی جس سے مستنیر ہوئی

حرا کی کوکھ سے پھوٹی ہے روشنی تازہ

 

بہار قلب و نظر کا ہوا سماں پیدا

نہال دل میں کھلیں کونپلیں کئی تازہ

 

صدا کو زمزمہ نو حروف کو معنی

ملی مغنی جاں کو بھی نغمگی تازہ

 

ترے ثبات سے عزم حسین زندہ ہے

ترے جلال سے ہے ضرب حیدری تازہ

 

ہے تیرے ساز سے پرسوز سینہ حبشی

ہے تیرے فقر سے روحِ ابوذری تازہ

 

فروغ جلوہ گہِ کن ترے ہی دم سے ہے

ترے کرم سے ہے بستانِ زندگی تازہ

 

پڑے جبیں پہ شکن تو فلک لرز اٹھے

تو مسکرائے تو ہو رسم دلبری تازہ

 

ترے پیام سے فکر و شعور چونک اٹھے

ملی تعجب و حیرت کو آگہی تازہ

 

ترے مزاج سے تہذیب کی ہوئی تذہیب

ملی تمدنِ بے جاں کو زندگی تازہ

 

کتاب دل کو عطا کی ہے شرحِ نو تونے

حدیث شوق کو بخشی ہے دل کشی تازہ

 

ترے نثار دگر گوں ہے حال امت کا

سجا رہا ہے جہاں بزم کافری تازہ

 

عطا ہو پھر دلِ مسلم کو حیدری جوہر

فضائے صحن حرم میں ہے ابتری تازہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ضیائے سدرہ و طوبیٰ و کل جہاں روشن
جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​
زمیں سے تا بہ فلک ایسا رہنما نہ ملا
مہر ھدی ہے چہرہ گلگوں حضورؐ کا
ہوئے جو مستنیر اس نقشِ پا سے
حَیَّ علٰی خَیر العَمَل
بس قتیلِ لذتِ گفتار ہیں
تجھے مِل گئی اِک خدائی حلیمہ
قائم ہو جب بھی بزم حساب و کتاب کی
نہیں شعر و سخن میں گو مجھے دعوائے مشاقی

اشتہارات