اردوئے معلیٰ

Search

کچھ دیر کو رسوائی جذبات تو ہو گی

محفل میں سہی اُن سے ملاقات تو ہو گی

 

بس میں نہیں اک دستِ پذیرائی گر اُس کے

آنکھوں میں شناسائی کی سوغات تو ہو گی

 

سوچا بھی نہ تھا خود کو تمہیں دے نہ سکوں گا

سمجھا تھا مرے بس میں مری ذات تو ہو گی

 

ہر حال میں ہنسنے کا ہنر پاس تھا جن کے

وہ رونے لگے ہیں تو کوئی بات تو ہو گی

 

میں پوچھ ہی لوں گا کہ ملا کیا تمہیں کھوکر

اک روز کہیں خود سے مری بات تو ہو گی

 

اِس بازیِ مابینِ غمِ وصلت و ہجراں

جس مات سے ڈرتے ہو وہی مات تو ہو گی

 

اِس آس پہ دن شہر ضرورت کو دیا ہے

اُجرت میں ترے ساتھ مری رات تو ہو گی

 

ہو جاؤں خفا میں تو منانے کوئی آئے

اے دوستو اتنی مری اوقات تو ہو گی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ