اردوئے معلیٰ

Search

کھو چکا قبل ازیں بول کے گویائی بھی

چھین لی جائے نہ گستاخ کی بینائی بھی

 

آگہی ، جادوئی زنبیل ہے ، جس میں سمٹی

وسعتِ خواب بھی ، تعبیر کی گہرائی بھی

 

وہ سخن پوش بھی خاموش ہے عریاں ہو کر

دم بخود ہیں سرِ بازار ، تماشائی بھی

 

کوچہِ عشق میں گم نام نہیں مر سکتا

خود نُما شوق کو منظور ہے رسوائی بھی

 

اُس کی افسردہ نگاہوں میں کہیں داد نہ تھی

ہم نے ہر چند غزل جھینپ کے دہرائی بھی

 

درد ، کم ظرف ، مروت کا روادار کہاں

کام آئی نہ شبِ ہجر شناسائی بھی

 

رہ گئے کانپ کے ہونٹوں کے دھڑکتے گوشے

اُڑ گئی لحنِ بلاء خیز کی رعنائی بھی

 

آپ ہی سونت لی تلوار ، مقابل اپنے

غیر ممکن ہوئی میدان سے پسپائی بھی

 

عمر ، اُس وادیِ آشوب میں اُتری ہے ، جہاں

گونج اُٹھتی ہے چٹختی ہوئی تنہائی بھی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ