اردوئے معلیٰ

Search

کہاں انسان سے ہو پائے گی مدحت محمد کی

زباں کر ہی نہیں سکتی بیاں عظمت محمد کی

 

خدا خالق ہے ، ربِ دو جہاں ہے اس میں کیا شک ہے

یقیناََ قائم و دائم رہی حُجت محمد کی

 

ادھر زنجیر میں جنبش ، ادھر گرمی ہے بستر میں

ادھر وہ لوٹ بھی آئے ، یہ ہے رفعت محمد کی

 

ادھر لشکر لعینوں کے ، ادھر کشتوں کے پشتے ہیں

پسِ پشتِ مسلماں ہے سدا ہمت محمد کی

 

عظیم المرتبت شبیرؑ کا وہ سجدۂ آخر

بڑھائی کربلا میں آپ نے عظمت محمد کی

 

کوئی پوچھے اگر اسلام کیا ہے بس یہی کہہ دو

خدا کا ہے تعارف صرف عبدیت محمد کی

 

جو کُوڑا ڈالتی تھی اس کے گھر پہنچے عیادت کو

یہ ہے رفعت محمد کی ، یہ ہے سیرت محمد کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ