اردوئے معلیٰ

کہاں سے لاؤں وہ حرف و بیاں نمی دانم

کہاں سے لاؤں وہ حرف و بیاں نمی دانم

حضور آپ کے شایانِ شاں، نمی دانم

 

کسے سناؤں، کہوں کس سے اپنا قصۂ غم

بجز حضور کوئی مہرباں نمی دانم

 

عطائیں رہتی ہیں مجھ جیسے بے ہنر پہ مدام

یہ کیسا ربط سا ہے درمیاں، نمی دانم

 

بس ایک نام ہے وجہِ اُمنگ، روح کے سنگ

گدائے حرف ہُوں، سود و زیاں نمی دانم

 

زبانِ عجز پہ لایا ہُوں اِک ثنائے شوق

سوائے اس کے کوئی ارمغاں نمی دانم

 

فقط مدینے میں پائی ہے بُوئے خلدِ بریں

ہے اس کے بعد کہیں بھی جناں، نمی دانم

 

ہمیشہ موسمِ گُل ہے ثنا گروں کا نصیب

گرفتِ عرصۂ شامِ خزاں نمی دانم

 

درود پڑھتے ہیں بے شک شجر، حجر ہر دم

مَیں ان کی شوق میں ڈوبی زباں نمی دانم

 

سجا کے رکھا ہے آنکھوں میں نقشِ نعلِ نبی

فلک پہ جو ہے سجی کہکشاں نمی دانم

 

وہ اِک سفر تھا زمان و مکاں کی حد سے ورا

لقا کی بزم پسِ لا مکاں نمی دانم

 

سپردِ حیرت و حسرت ہُوں دیر سے مقصودؔؔ

جہانِ معنیٔ قُربِ کماں نمی دانم

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ