اردوئے معلیٰ

 

کیا خوب مدینہ کے گلستاں میں پھرے تھا

محبوب کے جلوؤں کے چراغاں میں پھرے تھا

 

پہچان لیا خود کو محمد کی بدولت

پہلے تو بس اک صورت انساں میں پھرے تھا

 

کیا عشق فروزاں تھا مرے آلِ نبی میں

کیا نورِ نبی خونِ شہیداں میں پھرے تھا

 

بس ایک اشارے پہ بدن چاک ہوا وہ

کیا عشق کا جذبہ مہ تاباں میں پھرے تھا

 

کیا لطف تھا مت پوچھیے، گل شہرِ نبی میں

اخلاق و محبت کے دبستاں میں پھرے تھا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات