اردوئے معلیٰ

Search

کیجیئے ایسا کچھ کرم آقا

دیکھ لوں آپ کا حرم آقا

 

مجھ سے اب تو سہے نہیں جاتے

ہجر کے ظلم اور ستم آقا

 

اِذن دے دیجیئے مدینے کا

تا کہ لُوں میں سُکوں کے دَم آقا

 

آپ کی یاد موجزن دل میں

لب پہ مدحت ہے دم ، بدم آقا

 

آپ کا عشق میری دنیا ہے

اور طاعت مرا دھرم آقا

 

آپ کا اک اشارئہ رحمت

میرا سرمایہء بھرم آقا

 

آپ کے سایہء محبت میں

نعت کرتا ہوں میں رقم آقا

 

جان و اموال سے زیادہ بھی

ہیں رضاؔ مجھ کو محترم آقا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ