اردوئے معلیٰ

Search

کیجیے کس زباں سے شکرِ خدا

کِیں عطا اس نے نعمتیں کیا کیا

 

ہر سرِ مُو ہو گر ہزار زباں

ہر زباں سے کروں ہزار بیاں

 

مُو برابر نہ ہو سکے تقریر

حمدِ خلاق و شکرِ رب قدیر

 

ہے و معطی و منعم و وہاب

جس کی رحمت کا کچھ نہیں ہے حساب

 

ہیں عنایاتِ ایزدِ غفار

یوں تو ہم سب پہ بے حساب و شمار

 

ہے مگر یہ عجیب فضل و کرم

کہ مخاطب کیا بخیرِ امم

 

شکر کس طرح سے کریں اس کا

کہ کِیا امتِ حبیب خدا

 

وہ رسولِ خدا شفیع امم

ہے لقب جن کا رحمتِ عالم

 

ان کے حق میں خدا نے فرمایا

تم کو رحمت کے واسطے بھیجا

 

ہم پہ احسان یہ کیا کیسا

ان کی امت میں جو کیا پیدا

 

واہ کیا ذاتِ پاکِ حضرت ہے

عینِ رحمت ہے ، عینِ رحمت ہے​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ