کیجیے کس زباں سے شکرِ خدا

کیجیے کس زباں سے شکرِ خدا

کِیں عطا اس نے نعمتیں کیا کیا

 

ہر سرِ مُو ہو گر ہزار زباں

ہر زباں سے کروں ہزار بیاں

 

مُو برابر نہ ہو سکے تقریر

حمدِ خلاق و شکرِ رب قدیر

 

ہے و معطی و منعم و وہاب

جس کی رحمت کا کچھ نہیں ہے حساب

 

ہیں عنایاتِ ایزدِ غفار

یوں تو ہم سب پہ بے حساب و شمار

 

ہے مگر یہ عجیب فضل و کرم

کہ مخاطب کیا بخیرِ امم

 

شکر کس طرح سے کریں اس کا

کہ کِیا امتِ حبیب خدا ﷺ

 

وہ رسولِ خدا ﷺ شفیع امم

ہے لقب جن کا رحمتِ عالم ﷺ

 

ان کے حق میں خدا نے فرمایا

تم کو رحمت کے واسطے بھیجا

 

ہم پہ احسان یہ کیا کیسا

ان کی امت میں جو کیا پیدا

 

واہ کیا ذاتِ پاکِ حضرت ﷺ ہے

عینِ رحمت ہے ، عینِ رحمت ہے​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

بڑی تشنگی ہے نیاز کی، بڑی آرزو ہے غُلام کو
نُورِ خُدا، اوجِ بشر، خیرالوریٰ، خیر البشر
لایا تو ہُوں مَیں باندھ کے امکانِ حرف و لفظ
سرمایۂ افکار ، عطائے شہہِ والاﷺ
کاش ایسا بھی کوئی لمحہ میسر آئے
نہ دوزخ یاد آتا ہے نہ جنت یاد آتی ہے
نبی کی چشمِ کرم کے صدقے فضائے عالم میں دلکشی ہے
زمین جس پہ نبوت کے تاجدار چلے
سرکا رکے جلووں سے معمور نظر رکھئیے
نعت کہنا مری قسمت کرنا