اردوئے معلیٰ

کیسی کیسی خبر نہیں آتی

بس کہ فرحت اثر نہیں آتی

 

جس سے مجھ کو رسائیِ منزل

اک وہی رہ گزر نہیں آتی

 

چاکِ داماں کی خیر ہو یا رب

منتِ بخیہ گر نہیں آتی

 

اچھی قسمت عطائے فطرت ہے

کچھ بزور و بزر نہیں آتی

 

ظلمتیں کیسی دل پہ ہیں طاری

اس طرف کیا سحر نہیں آتی

 

آدمی ہر قدم پہ ملتے ہیں

آدمیت نظرؔ نہیں آتی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات