اردوئے معلیٰ

Search

کیسے رکھتا میں آنکھوں کا نم تھام کر

خوب رویا ستونِ حرم تھام کر

 

آپ حرفِ تسلی عطا کیجئے

در پہ آیا ہوں رنج و الم تھام کر

 

مجھ کو گرنے کا ڈر اب تو قطعاً نہیں

مجھ کو رکھتا ہے تیرا کرم تھام کر

 

بال بیکا ہمارا ہو کیوں حشر میں

ان کا دامن نہ چھوڑیں گے ہم تھام کر

 

حکمِ رحمان سے خلد میں جائیں گے

مدحِ محبوبِ رب کا علم تھام کر

 

اہلِ جنت مدینے کی تابانیاں

دیکھتے ہوں گے بابِ اِرم تھام کر

 

اذنِ مدحت عنایت ہو اشفاقؔ کو

کب سے بیٹھا ہے کاغذ قلم تھام کر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ