اردوئے معلیٰ

Search

کیوں پھرتی ہے کھولے ہوئے بالوں کو بھلا شام

مانگا کرے شامِ درِ طیبہ کی دعا شام

 

ڈوبے ہیں کئی اِس کے تبحُّر میں زمانے

تکتی ہے ترے گیسوئے خمدار کو کیا شام ؟

 

غم ہائے زمانہ میں تسلّی کا سبب ہے

وہ قافلہِ درد جو کربل سے چلا شام

 

دل شامِ درِ یار کا عاشق ہے، سو خوش ہے

تو اپنی طبیعت کا بتا، اپنی سنا شام !

 

آ زائرِ طیبہ کی نگاہوں کا نشہ دیکھ

اے مستئِ چشمان و دلِ میکدہ آشام

 

ذوقِ دلِ عشّاق کو تسکین بھی دے گی

کھا آئے مدینے کی اگر آب و ہوا شام

 

آغازِ شبِ ہجر کے ہونے پہ ہو نادم

سن لے جو شبِ ہجر میں عاشق کی صدا شام

 

آپ اپنے تبسم سے تبسم کو بچا لیں

درپے ہے مرے اے شہِ لَوْلَاکَ لَمَا ! شام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ