گذشتہ رات یادِ شاہ دل میں سو بسو رہی

 

گذشتہ رات یادِ شاہ دل میں سو بسو رہی

زمینِ قلب دیر تک جلیسِ رنگ و بو رہی

 

اذاں میں جس کا تذکرہ سنا تھا ماں کی گود میں

مرے قلم کی نوک پر اسی کی گفتگو رہی

 

کفِ طلب میں بے قرار تھیں مری عقیدتیں

جبینِ دل کو سنگِ در پہ خم کی آرزو رہی

 

صبا نے چوم لی ہے تیرے بام و در کی روشنی

اسی لئے تو کشتِ گل میں باعثِ نمو رہی

 

جبینِ ناز پر نجومِ عرق ضوفشاں ہوئے

جوارِ شہرِ نور کی ہوا بھی مشکبو رہی

 

درونِ دل خیال معتکف رہا حضور کا

اگرچہ میرے لب پہ رونقِ صدائے ہُو، رہی

 

زمین کی نظر کو بھا گئی ہے رفعتِ فلک

عجم کی مشتِ خاک کو عرب کی جستجو رہی

 

کیا ہے جب بھی دھڑکنوں نے ورد تیرے نام کا

رگِ حیات میں رواں کرم کی آب جو رہی

 

بدن کو راہِ زیست پر گھسیٹتے رہے مگر

ہماری روح سنگِ آستاں کے روبرو رہی

 

جہاں بھی ذکرِ اہلِ بیتِ مصطفیٰ کیا گیا

فراتِ غم میں آنسوؤں سے آنکھ باوضو رہی

 

درودِ پاک جب تلک پڑھا گیا حضور پر

ملائکہ کی فوج میرے گھر میں چار سو رہی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

یا خُدا! عشقِ محمدؐ کا عطا اِک جام کر
سوالی آپؐ سے ہے میری چشمِ تر، مرے آقاؐ
عجیب رہتا ہے اب تک خمار آنکھوں میں
جب سے کیا ہے آپ نے انوارِ حق میں گُم
وہ بے نشان کا طلعت نشاں سراجِ منیر
خامۂ خاموش مُضطر، چشمِ پُر نم معتبر
سخن کے ظلمت کدوں کو خورشید کر رہا ہُوں
خوشبو طراز رنگوں کی جھالر ہے سامنے
عشقِ محبوبِ خدا روحِ مسلمانی ہے
میرے اللّٰہ مجھے اتنی سی توفیق ملے

اشتہارات