اردوئے معلیٰ

Search

گر شاہِ دو عالم کے سہارے نہیں ہوتے

امت کے بھی یوں وارے نیارے نہیں ہوتے

 

پھر چاند کہاں ٹوٹ کے جڑتا مرے آقا

گر آپ کی انگلی کے اشارے نہیں ہوتے

 

سرکار کی نگری کا بیاں حسن ہو کیسے

ایسے تو کہیں اور نظارے نہیں ہوتے

 

جی جان فدا کر دے جو حرمت پہ نبی کے

اس پیار کے سودے میں خسارے نہیں ہوتے

 

اے شاہِ اُمم دَر پہ بلا لیجیے خدارا!

اب دور مدینے سے گزارے نہیں ہوتے

 

محشر میں نہ ہو سکتی گنہ گار کی بخشش

گر سیدِ ابرار ہمارے نہیں ہوتے

 

ملتی نہ اگر نور کی خیرات فلک کو

یہ شمس و قمر اور ستارے نہیں ہوتے

 

اے ناز کرم ہم پہ ہے محبوبِ خدا کا

ورنہ تو حسیں بخت ہمارے نہیں ہوتے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ