اردوئے معلیٰ

Search

گرمیِ شہر ضرورت سے پگھل جاؤ گے

نہیں بدلے ہو ابھی تک تو بدل جاؤ گے

 

اس چمکتے ہوئے دن کو نہ سمجھنا محفوظ

اپنے سائے سے بھی نکلو گے تو جل جاؤ گے

 

گردش وقت ہے آتی ہے سبھی کے سر پر

وقت گزرے گا تو اس سے بھی نکل جاؤ گے

 

یہ محبت کے مقامات ہیں اے جان نظر

اتنا محتاط چلو گے تو پھسل جاؤ گے

 

اپنی تابش کو زمینوں سے نہ کرنا مشروط

ورنہ سورج کی طرح شام کو ڈھل جاؤ گے

 

گر رہا ہوں میں مسلسل ہی، مگر جانے کیوں

کوئی اندر سے یہ کہتا ہے سنبھل جاؤ گے

 

تھام کر ہاتھ چلو تم بھی ظہیرؔ اپنوں کا

ورنہ اِس بھیڑ میں غیروں سے بدل جاؤ گے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ