اردوئے معلیٰ

Search

گفتگوئے شہ ابرار بہت کافی ہے

ہو محبت تو یہ گفتار بہت کافی ہے

 

یادِ محبوب میں جو گزرے وہ لمحہ ہے بہت

اس قدر عالم انوار بہت کافی ہے

 

مدح سرکار میں یہ کیف، یہ مستی ،یہ سرور

میری کیفیتِ سرشاربہت کافی ہے

 

للہ الحمد کہ ہم سوختہ جانوں کیلیے

شاہ کا سایہ دیوار بہت کافی ہے

 

کاش اک اشک بھی ہو جائے قبولِ شہ دیں

ایک بھی گوھرِ شہوار بہت کافی ہے

 

نصرتِ اہل ہمم کی نہیں حاجت مجھ کو

مددِ احمدِمختار بہت کافی ہے

 

بے ادب ! دیکھ نہ یوں روضے کی جالی سے لپٹ

کم نظر! بوسہ دیوار بہت کافی ہے

 

روبرو رہتے ہیں انوارِ مدینہ مظہر

حسرتِ جلوہ دیدار بہت کافی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ