اردوئے معلیٰ

Search

گلاب فکر ہے ان سے عمل بھی لالۂ خیر

جڑا ہے ذکر سے ان کے ہر اک حوالۂ خیر

 

زباں ہے لفظ طلب تو بیان عجز نشاں

قلم ہے تشنہ رقم لکھنے کو مقالۂ خیر

 

انہی کی سیرتِ اطہر انہی کا خلقِ عظیم

مطالعاتِ جہاں میں حسیں مقالۂ خیر

 

ورق ورق پہ ہیں روشن عطا و مہر و کرم

حیاتِ نور کا دفتر کھلا رسالۂ خیر

 

عطا نواز ہیں ان کے گدا بھی شاہوں کو

رہِ حبیب کے ذرّے بنے ھمالۂ خیر

 

کوئی بوصیری و حسّاں اگر ثنا میں رہے

اسے کریم عطا کرتے ہیں دو شالۂ خیر

 

کریں گے آپ شفاعت گناہ گاروں کی

مرے حضور مری بھی کریں وکالۂ خیر

 

بنامِ سیّدہ زہرا ہماری ماں کو ملے

لکھا ہوا ہے شفاعت کا جو قبالۂ خیر

 

رہِ حیات ہے روشن بہ نُورِ آلِ عبا

کہ تیری ذات ہے طٰہٰ وہ تیرے ھالۂ خیر

 

ظفر نصیب ہے مجھ کو جو نعتِ خیر یہاں

بروزِ حشر بھی حاصل رہے حوالۂ خیر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ