اردوئے معلیٰ

گلہائے عقیدت ہیں مرے اشک چُکیدہ

اوقات کہاں میری لکھوں تیرا قصیدہ

 

بیدار ہوا تجھ سے زمانوں کا مقدر

آزاد ہوئے دشت کے آشوب رسیدہ

 

چوکھٹ پہ تری ٹوٹا فسوں طرز ِ کہن کا

اک نعرہء یک رنگ بنی فکر ِ پریدہ

 

قدموں میں ترے آن گرے کوہِ گراں بھی

ہیبت سے تری خاک ہوئے تخت ِ دمیدہ

 

اے خاصہء خاصاں، ترے افکار کے صدقے

اصنام گزیدہ تھے جو، ہیں امت ِ چیدہِ

 

خیرات مجھے عشق ِ بلالی سی عطا کر

دے درد کی سوغات ، شب ِ ہجر طپیدہ

 

دامن رہے بے داغ سدا تجھ سے وفا کا

سرسبز رہے تا بہ ابد میرا عقیدہ

 

درویش کبیدہ ہوں، تپیدہ ہیں دل و جاں

وابستہ مگر تجھ سے ہے امید ِ چشیدہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ