اردوئے معلیٰ

Search

گو ہوں یکے از نغمہ سرایانِ محمد

شاید کہ مری لے نہیں شایانِ محمد

 

ہے پاسِ ادب شرطِ نُخُستینِ مَحبّت

بد مست نہ ہوں زمزمہ سنجانِ محمد

 

جو بھی ہے تجلی کہیں پھوٹی ہے یہیں سے

ہے مطلعِ ہر مہر، گریبانِ محمد

 

ظلمت کدہِ دہر میں لو دیتی رہے گی

تا صبحِ ابد شمعِ فروزانِ محمد

 

سورج کی طرح یہ بھی دلیل آپ ہے اپنی

محتاجِ نظائر نہیں برہانِ محمد

 

دیں اس کی صداقت کی تو منکر بھی گواہی

ہے مثلِ حرم حرمتِ پیمانِ محمد

 

آئینہِ اسکندر و پیمانہِ جمشید

ہر سنگ رہے آبلہ پایانِ محمد

 

جانے کہ نہ جانے کوئی مانے کہ نہ مانے

ہر دور ہے بہرہ ورِ فیضانِ محمد

 

اقرار سے ممکن ہے کہ مانع ہو تعصب

ہر قوم پہ ہے بیش و کم احسانِ محمد

 

ظاہر بھی نہاں بھی صفتِ لفظ و معانی

ادراکِ بشر سے ورا شانِ محمد

 

خاکی بھی ہے نوری بھی پیمبر بھی بشر بھی

ہے بھی کہیں یارب حدِ امکانِ محمد

 

تا حشر در و دشت کو مہکاتی رہے گی

خوشبوئے گلِ سنبل و ریحانِ محمد

 

مستقبلِ تہذیب ہے مخدوش، نہ جب تک

دستورِ زمانہ بنے قرآنِ محمد

 

ہم فرد ہیں جس ملتِ بیضا کے اسے بھی

حاصل نہیں حاصل نہیں عرفانِ محمد

 

تاویلِ احادیث کا آتا ہو جسے علم

ایسا نہ ملا کوئی زباں دانِ محمد

 

دل خوب سمجھتا ہے مَحبت کے تقاضے

ہر کسبِ کمال اس کا ہے قربانِ محمد

 

کیا جانیے کس بات پہ دنیا کو گماں ہے

خالؔد بھی ہے منجملہِ خاصانِ محمد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ