اردوئے معلیٰ

Search

ہاتھوں میں لئے سنگ کی سوغات چلی ہے

اُترے گی مرے گھر ہی جو بارات چلی ہے

 

ملتے ہیں گھڑی بھر کو دکھانے کے لئے زخم

یاروں میں نئی طرزِ ملاقات چلی ہے

 

لگتا ہے کہ افسانۂ رسوائی بنے گی

وہ بات جو اغیار سے بے بات چلی ہے

 

جو عشق نے چاہا ہے وہی کر کے دکھایا

کب دل کے حضور اپنی کوئی بات چلی ہے

 

پھر کوئے سیاست میں بعنوانِ شریعت

اک رسمِ خریداریِ جذبات چلی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ