ہجر تیرا مجھر اچھا نہیں ہونے دے گا

 

ہجر تیرا مجھر اچھا نہیں ہونے دے گا

نا شکیبا کو شکیبا نہیں ہونے دے گا

 

میں گنہگار ہوں لاریب مگر محشر میں

میرا آقا مجھے رسوا نہیں ہونے دے گا

 

میرا اللہ فقط کام بنائے گا مرا

مجھ کو ناکامِ تمنا نہیں ہونے دے گا

 

جل رہا ہے یہاں تہذیب کا مصطفوٰی چراغ

جو زمانے میں اندھیرا نہیں ہونے دے گا

 

میں ہوں دیوانہِ محبوبِ خدا دیدہ ورد

یہ جنوں اور کسی کا نہیں ہونے دے گا

 

ایک قطرے کو ہے معلوم حقیقت اپنی

ظرف اس کا اسے دریا نہیں ہونے دے گا

 

ابرِرحمت ہے جو ہر سمت برستا جائے

باغِ ہستی کو وہ صحرا نہیں ہونے دے گا

 

رات دن صّلِ علیٰ میری زباں پر جاری

ذکر اس کا مجھے تنہا نہیں ہونے دے گا

 

اس کا فیضان کرم مجھ پہ ہے بے حد قیصر

اب وہ محتاج کسی کا نہیں ہونے دے گا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

تیرے قدموں میں آنا میرا کام تھا
ہم تو آواز میں آواز ملاتے ہیں میاں
طیبہ کے مسافر کو کہہ دو کہ سنبھل جائے
جب سے ہوا وہ گل چمن آرائے مدینہ
دلدار بڑے آئے محبوب بڑے دیکھے
خالق کے شاہکار ہیں خلقت کے تاجدار
خوشبو اُتر رہی ہے مرے جسم وجان میں
بسائیں چل کے نگاہوں میں اُس دیار کی ریت
دونوں جہاں میں حسن سراپا ہیں آپ ہی
ذات عالی صفات کے صدقے

اشتہارات