ہجر میں سوزِ دل تو ہے خیرِ انام کے لیے

ہجر میں سوزِ دل تو ہے خیرِ انام کے لیے

دیکھیے کب ہو حاضری در پہ سلام کے لیے

 

اُسوۂ شاہِ دیں کا ہو دل پہ طلوع آفتاب

تاکہ شفق ٹھہر سکے زیست کی شام کے لیے

 

ان کا پیام جزوِ جاں ایسے بنایئے کہ پھر

مژدۂ جاں فزا ملے، عیشِ دوام کے لیے

 

اہلِ جنوں بھی مصلحت کوش ہوئے عجیب ہے!

برق و شرار تھا جنوں سارے ظِلام کے لیے

 

تیغِ یقیں بھی آگئی حیف نیامِ وقت میں!

کس نے بنا دیا نیام ایسی حُسام کے لیے

 

امتیٔ شہِ زمن ایسا عقاب تھا کبھی

جس کی شبیہ تک نہ تھی دانہ و دام کے لیے!

 

کاش کبھی میں کہہ سکوں خواب میں آیئے حضور !

دل کا چمن کھلا ہے آج لطفِ خرام کے لیے

 

کیسے دعا بدل سکے اپنا نظامِ زندگی

چاہیے اُن کی پیروی، اُن کے نظام کے لیے

 

دل کی صدا کی گونج ہے ارضِ حجاز تک عزیزؔ

کاش اشارہ وہ کریں اپنے غلام کے لیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

محمد مصطفیٰ سالارِ دیں ہیں
سوچتے سوچتے جب سوچ اُدھر جاتی ہے
وہ جو قرآن ہو گیا ہوگا
کوئی مثل مصطفیٰ کا کبھی تھا نہ ہے نہ ہوگا
آخری عکس
رکھا بے عیب اللہ نے محمد کا نسب نامہ​
حقیقت میں تو اس دنیا کی جو یہ شان و شوکت ہے
نبی کی نعت پڑھتا ہوں کہ ہے یہ دل کشی میری
ذاتِ والا پہ بار بار درود
نہ ہو آرام جس بیمار کو سارے زمانے سے

اشتہارات