اردوئے معلیٰ

ہجومِ شوق اکساتا ہے نعتِ مصطفیٰ کہئے

ہجومِ شوق اکساتا ہے نعتِ مصطفیٰ کہئے

بایں بے مائیگی لیکن پریشاں میں ہوں کیا کہئے

 

شہِ کون و مکاں کہئے حبیبِ کبریا کہئے

عظیم المرتبت ہستی انہیں بعدِ خدا کہئے

 

امام الانبیاء ختم الرسل خیر الوریٰ کہئے

انہیں ماہِ مبیں شمعِ شبستانِ حرا کہئے

 

شکوہِ رب خلیل اللہ کی جانِ دعا کہئے

انہیں شمس الضحیٰ بدر الدجیٰ شمعِ ہدیٰ کہئے

 

ہے سب فرمودۂ ربی بلا شک ان کا فرمودہ

مثالِ آیتِ قرآں نہ کیوں قول آپ کا کہئے

 

محمد اور احمد نام دونوں ان کے پاکیزہ

ہے لازم نام سن کر آپ کا صلِّ علیٰ کہئے

 

گدائے بے نوا اس در کے بنتے تاجور دیکھے

نہ کیوں اس ذات کے سایہ کو پھر ظلِ ہما کہئے

 

مقامِ قرب و بُعد اللہ سے ان کا خدا جانے

شبِ اسرا رسائے عرش بے چون و چرا کہئے

 

انہیں کی پیروی میں ہے سرورِ زندگی پنہاں

نجاتِ امتِ عاصی کا ان کو آسرا کہئے

 

ہزاروں درد کا درماں وہی ماحول نورانی

انہیں کے آستاں پہ چل کے دل کا ماجرا کہئے

 

علی الترتیب ان کے جانشیں کوئی اگر پوچھے

تو صدیقؓ و عمرؓ عثماںؓ علیؓ ِ مرتضیٰ کہئے

 

خرد کی نارسائی سے نظرؔ خاموش ہو جائے

تمنا چاہتی رہ جائے کچھ اس کے سوا کہئے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ