اردوئے معلیٰ

Search

ہر ایک مقام پہ اصلِ نشانِ رحمت ہے

حضور آپ کا اُسوہ جہانِ رحمت ہے

 

زمینِ دل پہ ہے روِز ازل سے سایہ فگن

حضور آپ کی ہر بات شانِ رحمت ہے

 

وہی تو گالیاں سن کر دعائیں دیتے ہیں

اُنہی کا خُلق ہی روحِ بیانِ رحمت ہے

 

عمل سے عاری ہے لیکن نہیں تہی داماں

ترا غلام ہے اور درمیانِ رحمت ہے

 

جہاں کی رونقیں سب آپ ہی کے دم سے ہیں

وجود ارض و سما، ارمغانِ رحمت ہے

 

جلیل کیسے نہ قسمت پہ اپنی ناز کرے

یہ بے عمل بھی بڑا شادمانِ رحمت ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ