اردوئے معلیٰ

ہر شے کو تبھی جشن منانے کی پڑی ہے

 

ہر شے کو تبھی جشن منانے کی پڑی ہے

یہ والیٔ کونین کے آنے کی گھڑی ہے

 

آئے ہیں سرِ عرشِ عُلا سیدِ عالَم

کُل خلقِ جناں دید بہ کف رہ میں کھڑی ہے

 

طیبہ کی کرم بار گھٹائیں ہیں نظر میں

آنکھوں سے رواں حبِ مدینہ کی لڑی ہے

 

ملتا ہے ترے در سے بنا مانگے ہمیشہ

رحمت تری اے شاہ اُمم کتنی بڑی ہے

 

حاصل ہے مجھے نسبتِ نعتِ شہِ والا

صد شکر عقیدت مری مدحت سے جڑی ہے

 

نعلین کرم بار ہے سر پر مرے منظرؔ

قندیلِ عقیدت مرے ماتھے پہ جڑی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ