اردوئے معلیٰ

Search

ہر صبح ہے نورِ رُخِ زیبائے محمد

ہر شام ہے گیسوئے دل آرائے محمد

 

جپتی نہیں نظروں میں دو عالم کی تجلّی

ہے جب سے تصور میں سراپائے محمد

 

آئینے میں خود آئینہ گر بول رہا ہے

جو حکمِ خدا ہے وہی ثنائے محمد

 

انسان کو اگر تربیتِ فکر و نظر ہو

پھیلی ہوئی ہر سمت ہے دنیائے محمد

 

کانٹے مرے تلووّں کے لئے لالہ و گُل ہیں

گلشن ہے مرے واسطے صحرائے محمد

 

کب سے درِ اقدس کو ہیں بے تاب نگاہیں

کب سے مرے دل میں ہے تمنائے محمد

 

دانش مری آدابِ محبت پہ منظر ہے

قبلہ ہے مرا نقشِ کف پائے محمد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ