اردوئے معلیٰ

ہر موج ہوا زلف پریشانِ محمد

ہے نُور سحر صورتِ خندانِ محمد

 

کچھ صبحِ ازل کی خبر نا شامِ ابد کی

بیخود ہوں تہِ سایہِ دامانِ محمد

 

تو سینہ صدیقؓ میں اک رازِ نہاں ہے

اللّٰہ رے اے صورتِ جانانِ محمد

 

چُھٹ جائے اگر دامنِ کونین تو کیا غم

لیکن نہ چُھٹے ہاتھ سے دامانِ محمد

 

دے عرصہ کونین میں یا رب کہیں وسعت

پھر وجد میں ہے روحِ شہیدانِ محمد

 

بجلی ہو ، مہ ومہر ہو، یا شمعِ حرم ہو

ہے سب کے جگر میں رُخِ تابانِ محمد

 

اے حسنِ ازل اپنی اداؤں کے مزے لے

ہے سامنے آئینہ حیرانِ محمد

 

اصغر تیرے نغموں میں بھی ہے جُوش درود اب

اے بُلبُلِ شُوریدہ بُستان محمد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات