ہر موج ہوا زلف پریشانِ محمدؐ

ہر موج ہوا زلف پریشانِ محمدؐ

ہے نُور سحر صورتِ خندانِ محمدؐ

 

کچھ صبحِ ازل کی خبر نا شامِ ابد کی

بیخود ہوں تہِ سایہِ دامانِ محمدؐ

 

تو سینہ صدیقؓ میں اک رازِ نہاں ہے

اللّٰہ رے اے صورتِ جانانِ محمدؐ

 

چُھٹ جائے اگر دامنِ کونین تو کیا غم

لیکن نہ چُھٹے ہاتھ سے دامانِ محمدؐ

 

دے عرصہ کونین میں یا رب کہیں وسعت

پھر وجد میں ہے روحِ شہیدانِ محمدؐ

 

بجلی ہو ، مہ ومہر ہو، یا شمعِ حرم ہو

ہے سب کے جگر میں رُخِ تابانِ محمدؐ

 

اے حسنِ ازل اپنی اداؤں کے مزے لے

ہے سامنے آئینہ حیرانِ محمدؐ

 

اصغر تیرے نغموں میں بھی ہے جُوش درود اب

اے بُلبُلِ شُوریدہ بُستان محمدؐ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

مجھے کامل یقین ہے، التجاؤں میں اثر ہو گا
بے نوا ہوں مگر ملال نہیں
عشق کا ہے یہ ہنر،میں ہوں یہاں نعت خواں
سرکار کی مدحت کو ہونٹوں پہ سجانا ہے
’’اے خاور حجاز کے رخشندہ آفتاب‘‘
جبینِ خامہ حضورِ اکرم کے سنگِ در پر جھکائے راکھوں
کسے نہیں تھی احتیاج حشر میں شفیع کی
میم تیرے نام کی تلخیصِ ہست و بود ہے
پل سے اتارو ، راہ گزر کو خبر نہ ہو
آپؐ سے میری نسبت مرا فخر ہے

اشتہارات