اردوئے معلیٰ

 

ہر نبی شاہدِ خدا نہ ہوا​
آپ سا کوئی دوسرا نہ ہوا​

 

کرمِ شہرِ علم سے پہلے​
نعت کہنے کا حوصلہ نہ ہوا​

 

دل رہا ہر قدم پہ سر بسجود​
میں مدینے کو جب روانہ ہوا​

 

لاکھ پلکوں سے خاکِ طیبہ چنی​
” حق تو یہ ہے کہ حق ادا نہ ہوا”​

 

فرشِ خاکی سے عرشِ نوری تک​
کس جگہ ذکرِ مصطفےٰ نہ ہوا​

 

آپ کی یاد کے سوا کوئی​
کشتیء جاں کا ناخدا نہ ہوا​

 

دل کہ تھا ایک بے نوائے ازل​
آپ کے لطف کا خزانہ ہوا​

 

آپ کا در نہ وا ہوا جس پر​
کوئی دروازہ اس پہ وا نہ ہوا​

 

جالیوں ہی کو چوم لیں گے ایاز​
گر کرم باِلمشافِہہَ نہ ہوا​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات