اردوئے معلیٰ

Search

ہر وقت دل کی آنکھ کو طیبہ دکھائی دے

وقتِ نزع حضور کا جلوہ دکھائی دے

 

تیرہ شبی ہوئی ہے مسلط حیات پر

میرے حضور آپ کا چہرہ دکھائی دے

 

میرے بھی گھر میں بھیک غلامی کی ہو عطا

میرے بھی گھر میں خُلد کا نقشہ دکھائی دے

 

کیسے سجے گی سرپہ یہ دستارِ فخر جب

اُن کے گدائے شہر کا رتبہ دکھائی دے

 

کیسا فلک پہ چاند ستاروں کا نور ہے

مجھ کو تو یہ درود کا حلقہ دکھائی دے

 

رب کی رضا ہے سیرتِ اطہر کی پیروی

قربِ نبی کا بھی یہی زینہ دکھائی دے

 

جس کو نبی کی یاد کے آنسو نہیں نصیب

بہتر ہے ایسی آنکھ کو کچھ نہ دکھائی دے

 

جس پر چلے تو قرب ملے آپ کا حضور

اے کاش وہ شکیلؔ کو رستہ دکھائی دے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ