اردوئے معلیٰ

Search

ہر چیز مُشترک تھی ہماری سوائے نام

اور آج رہ گیا ہے تعلق برائے نام

 

اشیائے کائنات سے ناآشنا تھا میں

پھر ایک اِسم نے مجھے سب کے سکھائے نام

 

تب میں کہوں کہ سچا ہوں یک طرفہ عشق میں

وہ میرا نام پوچھے ، مجھے بھول جائے نام

 

وہ دلرُبا بھی تھی کسی شاعر کی کھوج میں

میں نے بھی پھر بتایا تخلص بجائے نام

 

لشکر بنا رہا ہوں جوانانِ عشق کا

جس میں بھی آگ ہے ، مجھے مِل کر لکھائے نام،

 

تو عشق پائے عشق کے مرنے کے بعد بھی

فارس! مزارِ دل پہ ترا جگمگائے نام

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ