ہر گھڑی، ہر دَم عطا ہے آئیے طیبہ چلیں

ہر گھڑی، ہر دَم عطا ہے آئیے طیبہ چلیں

بابِ رحمت جو کُھلا ہے آئیے طیبہ چلیں

 

سب کی سُنتے ہیں، مدد کرتے ہیں شاہِ انبیاء

واں کرم کی اِنتہا ہے آئیے طیبہ چلیں

 

ہیں ملائک دَر ملائک پیشِ محبوبِ خدا

اور درودوں کی صدا ہے آئیے طیبہ چلیں

 

رَشکِ خورشید و قمر ذرّہ مدینے پاک کا

نور کی محفل بپا ہے آئیے طیبہ چلیں

 

گُنبدِ خضریٰ پہ نورانی نظارے دیکھنے

جن کے دِل میں وَلولہ ہے آئیے طیبہ چلیں

 

آنکھ نَم ہے، جوش دِل میں، لب پہ ہے ذِکرِ نبی

کیا رضاؔ بھی جھومتا ہے آئیے طیبہ چلیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سرکارؐ کے کرم سے یہ فیضانِ نعت ہے
میرے دل میں ہے یادِ محمدؐ میرے ہونٹوں پہ ذکرِ مدینہ
کرم کی چادر مِرے پیمبر
درِ نبی پہ مقدر جگائے جاتے ہیں
انداز کریمی کا نِرالا نہیں گیا
رسولِ محترم ختم‌النبیّین
لبوں پہ جب بھی درود و سلام آتا ہے
یہ ناز یہ انداز ہمارے نہیں ہوتے
آپ کی یادوں سے جب میری شناسائی ہوئی
کس کا جمال ناز ہے جلوہ نما یہ سو بسو