اردوئے معلیٰ

Search

ہزار دل میں مرے زخمِ انتظار آئے

خدا کرے کہ وہ اب رشکِ روزگار آئے

 

ہوائے دہر کسی کو نہ سازگار آئے

یہی سبب ہے جو آئے وہ اشک بار آئے

 

خوشا نصیب کہ رندوں کو اذنِ ساقی ہے

پیے ہی جائیں نہ جب تک انہیں خمار آئے

 

اسی کی یاد ہے اب زندگی کا سرمایہ

کسی کی بزم میں جو وقت ہم گزار آئے

 

صعوبتوں کو بہ خندہ جبیں کیا انگیز

اسی طلب میں کہ اے کاش کوئے یار آئے

 

ہم آخرش کہ قیامت کی نیند سوئے ہیں

قرار اب تجھے اے چشمِ انتظار آئے

 

سنا جو ذکرِ بہاراں تو تیرے دیوانے

بہ چشمِ تر بہ گریبانِ تار تار آئے

 

مری نظرؔ سے نہ گزرو خیال میں آؤ

ہمارے دل کو کچھ اپنا بھی اعتبار آئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ