اردوئے معلیٰ

ہمیں وہ اپنا کہتے ہیں محبت ہو تو ایسی ہو

ہمیں رکھتے ہیں نظروں میں عنایت ہو تو ایسی ہو

 

چلا آوٗں مدینے میں میرے سرکار بلوایا

کہوں آقا یہ سب سے میں، اجازت ہو تو ایسی ہو

 

سجا کر محفلِ ذکرِ نبی گھر میں بیٹھا ہوں

وہ آ جائیں میرے گھر میں زیارت ہو تو ایسی ہو

 

بلا کر اپنے قدموں میں گناہگاروں کو بھی آقا

سند دیتے ہیں جنت کی شفاعت ہو تو ایسی ہو

 

کہا رب نے محمد سر اٹھاؤ اب تو محشر میں

کہ بخشا ہم نے امت کو حمایت ہو تو ایسی ہو

 

اشارہ جب وہ فرما دیں تو سورج بھی پلٹ آئے

کوئی لاؤ مثال ایسی حکومت ہو تو ایسی ہو

 

کلیم آساں نہیں نعتِ نبی لکھنا کسی دم بھی

کہ آقا نے ہے لکھوائی سعادت ہو تو ایسی ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات