اردوئے معلیٰ

Search

ہم بناوٹ سے نہیں کہتے کہ ہم تیرے ہیں​

ہم ترے در کی اٹھاتے ہیں قسم ، تیرے ہیں​​

 

چوم کر جن کو ملے کیف و سرور و مستی​

کیسے تاثیر رسا نقشِ قدم تیرے ہیں​​

 

غم دنیا کبھی پہلے ، نہ اب ہوگا کبھی​

شکرِ ایزاد! کہ مرے سینے میں غم تیرے ہیں​​

 

ہوں ابوبکرؓ و عمرؓ ، یا کہ ہوں عثمانؓ و علیؓ

سارے تابندہ یہ اصحابِ حشم تیرے ہیں​​

 

خوف کیا پیاس کی شدت کا بروزِ محشر​

ہم کہ پروردہ و آسودہ ء یم تیرے ہیں​​

 

تو گدایانِ محمد کا گدا ہے ارسل​

بس اسی واسطے دنیا میں بھرم تیرے ہیں​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ