اردوئے معلیٰ

ہم بے کسوں پہ فضل خدا ہے حضور سے

ہم بے کسوں پہ فضل خدا ہے حضور سے

اسلام کا شعور ملا ہے حضور سے

 

آدم کو اپنی ذات کی پہچان تک نہ تھی

انسان آدمی تو ہوا ہے حضور سے

 

بے کیف بے سرور تھی بے نور زندگی

اس میں سکوں کا رنگ بھرا ہے حضور سے

 

ہوں اہلِ بیتِ پاک یا اصحاب مصطفےٰ

وحدت کا سب نے جام پیا ہے حضور سے

 

کشمیر ہو عراق، فلسطیں کہ کوئی ملک

ہر کلمہ گو تو آسؔ جڑا ہے حضور سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ