اردوئے معلیٰ

ہم تو یونہی کبھی کبھی کہتے ہیں چھیڑ سے غزل

ہم تو یونہی کبھی کبھی کہتے ہیں چھیڑ سے غزل

پیشہ وروں پہ کیا بنی ، اہلِ زباں کو کیا ہوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ