اردوئے معلیٰ

Search

ہم سے ہی ایسے فکر کو پالا نہیں گیا

زیرِ زمین زر تھا نکالا نہیں گیا

 

جن کی دعا سے پیدا ہوئی ہے شعاعِ مہر

ان بستیوں میں اُس کا اُجالا نہیں گیا

 

گو سامنے نظر کے وہ شفاف جھیل تھی

دلدل سے اپنا پاؤں نکالا نہیں گیا

 

کچھ اس لیے بھی دور حقیقت کا شہر ہے

رنگوں سے آگے دیکھنے والا نہیں گیا

 

ہجرت وہ خود ہی کر گئیں یہ بھوک دیکھ کر

گھر سے ضرورتوں کو نکالا نہیں گیا

 

اس کو میں کس پتہ پہ جہاں میں کروں تلاش

دے وہ کوئی اپنا حوالہ نہیں گیا

 

ہم اس لئے بھی شہر میں بے ننگ و نام ہیں

ورثے میں جو ملا تھا سنبھالا نہیں گیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ