اردوئے معلیٰ

Search

ہم فقیروں پر سخی کا پھر کرم ہونے کو ہے

خوش نصیبی پھر ہمارے ہم قدم ہونے کو ہے

 

شاہِ محبوباں کے درکی حاضری ہو گی نصیب

قافلہ اپنا رواں سوئے حرم ہونے کو ہے

 

رحمتِ باری برسنے کا ہے موسم پھر قریب

جوئے سر شاری یہ اپنی چشمِ نم ہونے کو ہے

 

ہے درودی ساعتوں کا قریۂ جاں پر نزول

باصرہ افروز وہ قرآں شِیَم ہونے کو ہے

 

شہرِ شاہِ سروراں کی دید اور یہ کم تریں

اک فقیرِ بے نوا بھی محتشم ہونے کو ہے

 

نخلِ اُمیدِ حضوری وہ نظر آنے لگا

روشنی قلب و نظر میں دم بدم ہونے کو ہے

 

ان کے آنے کے تصوّر میں چمک اٹھی نظر

نصف شب بھی سوچتاہوں صبح دم ہونےکو ہے

 

یہ ثنائے نُورِ احمد حرفِ رنگ و نور سے

وقت کے ماتھے پہ دیکھو پھر رقم ہونے کو ہے

 

اے حدی خواں اور بھی کچھ تیز لے چل کارواں

دھڑکنوں کا یہ سفر اب مختتم ہونے کو ہے

 

جا رکھوں اے کاش نوری انکے قدموں میں یہ سر

زندگی اب بے نیاز ِ کیف وکم ہونے کو ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ