ہم پہ بھی تھوڑی دیر ترس کھائے زندگی

ہم پہ بھی تھوڑی دیر ترس کھائے زندگی

آئے ہیں ہم بھی ہجر کے آزار کاٹ کر

کس جرم میں مجھے یہاں چنوا دیا گیا

مجھ کو نکالو جسم کی دیوار کاٹ کر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

کیا تم اک بات مجھے کُھل کے بتا سکتی ہو
گل و بلبل کے افسانے کہاں تک
خدا کی حمد ہر لحظہ طریقِ عاشقاں ہو گا
خداوندِ زمین و آسماں تُو
محبت کا نشاں ہے خانہ کعبہ
خدا ہی مرکزِ مہر و وفا ہے
کہوں میں حمدِ ربّی کس زباں سے
حوالہ ہے تو عفو و در گزر کا
خدا انساں کی شہ رگ سے قریں ہے
خدا جس شخص کے دل میں مکیں ہے