اردوئے معلیٰ

ہنوز ایسے بھی انسان روزگار میں ہیں

کبھی سحر کے کبھی شب کے انتظار میں ہیں

 

یہ راہ سوچ سمجھ کر ہی اختیار کریں

وہ سوئے دار چلے ہیں جو کوئے یار میں ہیں

 

کچھ ایسے لوگ ابھی تک چمن میں ہیں شاید

فریب خوردہ خزاں میں نہ خوش بہار میں ہیں

 

بہ فیضِ سوزِ دروں اور بطرزِ اہلِ جنوں

وہی ہے منزلِ لیلیٰ کہ جس دیار میں ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات