اردوئے معلیٰ

Search

ہو اذن حضوری کا دعا مانگ رہے ہیں

آقا ترے قدموں میں جگہ مانگ رہے ہیں

 

درکار ہمیں کچھ نہیں اسبابِ زمانہ

بس شہرِ مدینہ کی ہوا مانگ رہے ہیں

 

مالک ترے محبوب کی کرپائیں ثنا ہم

وہ ذوق و تمنائے رضاؔ مانگ رہے ہیں

 

پوچھو نہ سوالی ہیں جو محبوبِ خدا کے

وہ جانتے ہیں کون ہیں کیا مانگ رہے ہیں

 

ظلمت کدۂ دہر میں امت ہے پریشاں

ہم نورِ منور کی ضیا مانگ رہے ہیں

 

مفہوم بدل دیتے ہیں الفاظ جہاں پر

مدحت ہو کچھ ایسی ہی عطا مانگ رہے ہیں

 

مل جائے غلامی کی سند ایسی ثنا ہو

ہم وارثیؔ وہ ذوقِ ثنا مانگ رہے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ